بریکنگ نیوز

حکومت آزادکشمیر میں سیاحت کے شعبے کی ترقی کیلئے موثر اور ٹھوس اقدامات اٹھائے

اگلے روز وزیر اعظم آزاد کشمیر راجہ فاروق حیدر خان کا ایک اعلی سطحی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہنا تھا کہ گزشتہ ساڑھے چار سال میں 45ارب روپے ریاستی بجٹ سے آزاد کشمیر کو پاکستان سے ملانے والی بین اضلاعی سڑکوں کی تعمیر پر خرچ کئے گئے اور سڑکوں کی تعمیر کا معیار بہتر بنایا گیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ حکومت ایک منظم پالیسی کے تحت ترقیاتی بجٹ مواصلات، سیاحت اور پیداواری شعبہ پر خرچ کررہی ہے۔ ہماری رائے میں علاقے کی تعمیر و ترقی کسی بھی خطے کی خوشحالی اور عوام کو سہولیات کی فراہمی کیلئے انتہائی اہمیت کی حامل ہے ۔ اس میں کوئی دو رائے نہیں کہ آزاد کشمیر میں مواصلات کے شعبے میں سڑکوں اور پلوں کی تعمیر بہتر انداز میں ہورہی ہے۔ آزاد کشمیر کا خطہ سیاحت کے حوالے سے بے پناہ صلاحیت کا حامل ہے ، حکومت ان علاقوں میں انفراسٹریکچر کی تعمیر پر فوکس کرے جہاں پر سیاحوں کی آمد و رفت زیادہ ہوتی ہے تاکہ سیاحت کا شعبہ ترقی کرے اور آنے والے سیاحوں کو آمد و رفت کی سہولتوں کے ساتھ ساتھ رہائش اور خوراک کی سہولتوں کو بھی ممکن بنایا جاسکے تو سیاحت کے فروغ سے آزاد کشمیر کا خطہ خودانحصاری کی طرف گامزن ہوگا ۔سیاحت کے شعبے میں ترقی سے لوگوں کو بہتر روزگار کے مواقعے بھی میسر آئینگے ۔ کیونکہ فی کس آمدنی میں اضافے سے علاقے میں خوشحالی آنے کے ساتھ ساتھ بے روزگاری کا بھی خاتمہ ممکن ہوگا۔ بلاشبہ مواصلات کے شعبے میں سڑکوں کی تعمیر پر خطیر رقم خرچ ہوئی ہے جو ایک مثبت پیشرفت ہے۔ ہماری رائے میں حکومت کو بین اضلاعی سڑکوں کے ساتھ سیاحتی مقامات کی طرف جانے والی سڑکوں کی معیاری تعمیر کے علاوہ سیاحت کے شعبے کے تحت ریسٹ ہائوسز اور ہٹس کی تعمیر کو یقینی بنائے تاکہ پاکستان کے دور دراز علاقوں سے آنے والے سیاح آزاد کشمیر کا رخ کریں ۔ مظفر آباد سے پیر چناسی کے درمیان چیئرلفٹ کا منصوبہ گزشتہ کئی سالوں سے التواء کا شکار ہے۔ حکومت کو اس منصوبے کی طرف توجہ دینے کے ساتھ ساتھ پیر چناسی کے علاقے میں پینے کے پانی کی فراہمی اور لوگوں کو رہائش کی سہولتیں میسر کرنے کیلئے اعلی معیار کے ریسٹ ہائوس تعمیرکرنے چاہیں ۔اس شعبے میں پرائیویٹ سیکٹر کو بھی شامل کرنے کیلئے حکومت پرائیویٹ سیکٹر کی حوصلہ افزائی کرے ۔ پبلک۔ پرائیویٹ سیکٹر کے اشتراک سے تمام سیاحتی مراکز میں بہتر انفراسٹریکچر کی تعمیر یقینی بنائی جائے تاکہ آنے والے سیاح سہولتوں سے استفادہ حاصل کرسکیں۔ ہماری دانست میں آزاد کشمیر کے خطے میں سیاحت کیلئے بے پناہ صلاحیت موجود ہے لیکن آج تک کسی بھی حکومت نے اس اہم شعبے کی طرف اس انداز میں توجہ نہ دی جس کی اس شعبے کو ضرورت تھی۔ آزاد کشمیر کے خطے میں بے پناہ قدرتی وسائل اور فطری حسن موجود ہے لہذا حکومت اس شعبے کی طرف خصوصی توجہ دیتے ہوئے اس کی ترقی کے ساتھ ساتھ جنگلات کے تحفظ کو بھی یقینی بنانے کیلئے موثر اقدامات اٹھائے تاکہ ماحولیاتی آلودگی سے بھی محفوظ رہا جاسکے اور آزاد کشمیر کا قدرتی حسن اور فطری ماحول بھی محفوظ رہے ۔ سیاحت کے شعبے میں حکومت کی طرف سے موثر اقدامات اور خصوصی توجہ سے نہ صرف آزاد کشمیر میں سیاحت کا فروغ ممکن ہوگا بلکہ پبلک پرائیویٹ سیکٹر کے باہمی اشتراک سے روزگار کے وسیع مواقع میسر آنے سے مقامی لوگوں کا معیار زندگی بھی بلند ہوگا۔

About Aziz

Check Also

,افغان عمل میں روڑے اٹکانے والوں پر نظر رکھنی ہو گی وزیر اعظم عمران خان کا یہ جملہ بھارت کیلئے سبکی کا باعث بنا

اگلے روز وزیر اعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ افغان عمل میں روڑے اٹکانے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *