بریکنگ نیوز

تعلیمی نصاب سازی سنجیدہ عمل ہے،پاکستان کی ضرورت اسلامی ،نظریاتی یکساں نصاب ہے ،لیاقت بلوچ

لاہور:نائب امیر جماعت اسلامی اور مجلس قائمہ سیاسی قومی امور کے صدر لیاقت بلوچ نے کہا ہے کہ پاکستان کی ضرورت اسلامی، نظریاتی یکساں نصاب اور نظام تعلیم کی ہے، تعلیمی نصاب سازی سنجیدہ عمل ہے، قومی تعمیر، مستقبل کی نسل کی تعلیم، تہذیب، اخلاقیات و ثقافتی تہذیب اس کے ساتھ وابستہ ہے۔ انہوں نے اپنے بیان میں کہا کہ یکساں قومی نصاب تعلیم کی آڑ میں دو قومی نظریہ اور قومی زبان اردو کی بے دخلی کی صورت قابل قبول نہیں۔ ملک کا نظام تعلیم سیکولر عناصر اور عالمی ایجنڈے کے تابع کر دیا ہے، یہ بدقسمتی ہے کہ پاکستان کی معیشت، تعلیم اور قومی پالیسی سازی اغیار کے تابع کر دی ہے۔ عمران خان سرکار ہر ہر محاذ پر نااہل اور مشکوک ہوتی جا رہی ہے۔ لیاقت بلوچ نے کہا کہ وزیراعظم نے منتخب قومی، صوبائی، سینیٹ ممبران پر غیرمنتخب افراد کو ترجیح دی۔ کاروبار حکومت ان مشیروں، معاونین خصوصی پر چل رہا ہے جبکہ ان کی شہریت امریکہ، برطانیہ، آسٹریلیا، ملائیشیا کی ثابت ہو گئی ہے، اگر ایک منتخب وزیراعظم اقامہ کی بنیاد پر فارغ کر دیا گیا۔ کابینہ اجلاس اور اہم قومی امور کے لئے نمائندگی کرنے والے دوہری شہریت، گرین کارڈ، اقامہ رکھنے والوں کو برطرف کیا جائے۔ انصاف کا تقاضا ہے کہ دو پاکستان ہیں ایک پاکستان کے اصول کو عملاً نافذ کیا جائے۔ مشکوک اور فسادی شیروں سے قوم کی جان چھڑائی جائے۔ انہوں نے کہا کہ ملی یکجہتی کونسل کا اہم اجلاس 23 جولائی کو گلگت میں منعقد ہو گا۔ عیدقربان، ماہ محرم الحرام اور تمام مسالک کے درمیان ہم آہنگی کے امور پر لائحہ عمل بنایا جائے گا۔ مساجد، مدارس، علمائ، مشائخ کرام پوری قوم کو دینی وحدت پر قسم اور منظم کرنے کے لئے اپنا قومی فرض اور کردار ادا کرتے رہیں گے۔

About Aziz

Check Also

کورونا وائرس کے باعث چھ ماہ سے بندپرائمری سکولز کھل گئے ،تدریسی سرگرمیوں کا آغاز

 اسلام آباد :عالمی وبا کورونا وائرس کے باعث چھ ماہ سے بند پرائمری سکولز میں …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *