بریکنگ نیوز

مقبوضہ جموں و کشمیر میں تحریک آزادی کی باگ دوڑ نوجوانوں نے سنبھال لی ہے،صدر آزاد کشمیر

مظفرآباد : آزاد جموں و کشمیر کے صدر سردار مسعود خان نے دنیا بھر میں پھیلے ہوئے کشمیری نوجوانوں پر زور دیا ہے کہ وہ تحریک آزاد کشمیر کی قیادت کو اپنے ہاتھ میں لے کر مقبوضہ کشمیر پر بھارت کے غاصبانہ اور ناجائز قبضہ کے خاتمہ کیلئے اقوام متحدہ کو اپنی قرار دادوں پر عملدرآمد کرنے پر مجبور کریں۔ تحریک کشمیر برطانیہ کے زیر اہتمام انٹر نیشنل یوتھ کنونشن سے ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب کرتے ہوئے صدر سردار مسعود خان نے کہا کہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں تحریک آزادی کی باگ دوڑ نوجوانوں نے سنبھال لی ہے اور آزاد کشمیر، پاکستان اور دنیا بھر میں پھیلے ہوئے نوجوانوں کی ذمہ داری ہے کہ وہ مقبوضہ کشمیر کے مظلوم عوام کی آواز کو دنیا تک پہنچائیں اور انسانیت کے خلاف بھارت کے گھناؤنے جرائم پر اسے جوابدہ ٹھہرائیں۔ تحریک کشمیر برطانیہ کے صدر فہیم کیانی کے صدارت میں ہونے والے اس یوتھ کنونشن سے برطانیہ کی مختلف تعلیمی اداروں میں زیر تعلیم کشمیری نوجوانوں کے علاوہ سکاٹ لینڈ، ڈنمارک، ناروے، اٹلی، سپین اور دوسرے یورپی اور سیکنڈے نیوین ممالک میں مقیم کشمیری اور پاکستانی نوجوانوں کے نمائندگان اور تحریک کشمیر کے عہدیداران نے شرکت اور خطاب کیا۔ صدر آزاد کشمیر سردار مسعود خان نے کشمیر کے حوالے سے اس اہم بین الاقوامی یوتھ کنونشن کے انعقاد پر تحریک کشمیر کے صدر فہم کیانی کو مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہا کہ تحریک کشمیر نے ہمیشہ اور خاص طور پر اگست 2019 کے بعد برطانیہ اور یورپ میں نوجوانوں کو منظم کر کے تحریک آزادی کشمیر کو اجاگر کرنے میں ایک اہم کردار اور قابل تقلید مثال قائم کی ہے جس پر فہیم کیانی اور ان کی پوری ٹیم مبارکباد کی مستحق ہے۔
مقبوضہ کشمیر کی صورتحال کا تذکرہ کرتے ہوئے صدر سردار مسعود خان نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں ہر گزرتے دن کے ساتھ صورت حال بد سے بد تر ہوتی جا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت نے گزشتہ 72 سال کشمیریوں کی وفاداریاں خریدنے اور انہیں غلامی کی زندگی قبول کرنے پر مجبور کرنے کے لیے تحریض و ترغیب کا ہر حربہ استعمال کیا لیکن کشمیریوں نے بھارت کی ہر چال کو مسترد کر کے اپنی جانوں کے نذرانے پیش کر کے نہ صرف تحریک آزادی کو زندہ رکھا بلکہ آج بھی کشمیر کی وادیوں اور کوہساروں میں آزادی کا وہی نعرہ گونج رہا ہے جس کی صدائے بازگشت کشمیر کی ہر گلی اور بازار میں 72 سال پہلے 1947 میں سنائی دیتی تھی۔ اس شمع آزادی کو اپنے لہو کا تیل دیکر روشن رکھنے والوں میں نوجوانوں کا نام سر فہرست ہے اور آج بھی وہ تحریک حریت کا روشن اور تابندہ باب مقبوضہ وادی کے نوجوان ہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بھارت نے نوجوانوں کے اس آہنی عزم اور ناقابل تسخیر جذبہ کو دیکھتے ہوئے مقبوضہ ریاست کی آزادی کے تناسب کو مستقل طور پر تبدیل کرنے کیلئے ایک نیا شیطانی منصوبہ شروع کیا جس کو ناکام بنانا آزاد کشمیر، پاکستان اور دنیا کے دیگر ممالک میں آباد نوجوانوں کی ذمہ داری ہے۔ بھارت کی انتہا پسند بی جے پی اور آر ایس ایس کی حکومت کے ڈومیسائل قوانین اور نوآبادیاتی منصوبے کو گذشتہ صدی کے نازی جرمنی کے ڈکٹیٹر ہٹلر کے نورم برگ قوانین اور غیر کشمیری ہندو شہریوں کو مقبوضہ کشمیر کا شہری قرار دیکر انکی کشمیر میں آباد کاری کو بلفور ڈکلیریشن سے مشابہ قرار دیتے ہوئے صدر سردار مسعود کہا کہ دونوں واقعات میں صرف اتنا فرق ہے کہ بلفور ڈکلیریشن کے تحت دنیا بھر کے یہودیوں کو فلسطین کی سرزمین پر آباد کرنے میں تیس سال کا عرصہ لگا تھا لیکن یہی کام بھارت دو سال میں کرنا چاہتا ہے۔ بھارت کے اس ناپاک منصوبے کو ناکام بنانے، اس منصوبے کو انسانیت کے خلاف جرم اور بھات کے جنگی جرائم میں سے ایک جرم بنا کر دنیا کی حمایت حاصل کرنے کیلئے نوجوان کمر بستہ ہو جائیں اور میڈیا اور پیغام سازی کے ہر ذریعہ کو استعمال کر کے اے بے نقاب کریں۔ انہوں نے کہا کہ پچھلے تین ماہ میں بھارت نے اٹھارہ لاکھ ہندوؤں کو مقبوضہ کشمیر کا ڈومیسائل جاری کر کے انہیں مقبوضہ کشمیر میں آباد کرنے کی رہ ہموار کر لی۔ کشمیریوں کی زمین ہتھیانے، ان کا ملازمت کا حق چھیننے کے بعد اب کشمیریوں کو معاشی طورپر مفلوج کرنے کیلئے تعمیراتی اور ترقیاتی منصوبوں کے غیر ریاستی لوگوں کو ٹھیکے دینے کا سلسلہ شروع کیا گیا تاکہ کشمیریوں کو معاشی اعتبار سے بھارت کا دست نگر بنادیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ صرف یہی نہیں بلکہ کشمیری نوجوانوں کو سرچ اور محاصرے کے عمل کے دوران قتل کرنے، نوجوانوں کو گرفتار کر کے انہیں نظربندی کیمپوں میں بند کر کے تشدد کا نشانہ بنانے اور نسل کشی اور نسلی تطہیر کے ذریعے کشمیریوں کی آبادی کو کم کرنے کی مہم بھی پوری طرح جاری ہے۔ بھارتی فاشسٹ حکمرانوں کے ہندو توا نظریہ پر اظہار خیال کرتے ہوئے صدر ریاست نے کہا کہ یہ نظریہ ہندو بالا دستی اس تصور پر مبنی ہے جس کے تحت ہندو ستان صرف ہندوؤں کا ملک ہے اور اس ملک کو مسلمانوں، سکھوں اور عیسائیوں سے پاک کیے بغیر خالص ہندو ریاست نہیں بنایا جا سکتا۔ انہوں نے پاکستانی اور کشمیری نژاد سمندر پار بسنے والے پاکستانی نوجوانوں سے اپیل کی ہے کہ وہ بدلے ہوئے حالات میں کشمیریوں کی تحریک آزادی اور حق خود ارادیت کی جدوجہد کو بین الاقوامی تحریک میں بدلنے کیلئے عملی اقدامات اٹھائیں اور اس تحریک کی قیادت اپنے ہاتھ میں لیکر اس جدوجہد کو نئی جہت اور طاقت عطا کریں۔

About admin

Check Also

مقبوضہ کشمیر کے عوام دنیا کی سب سے بڑی دہشتگردی کا مقابلہ کررہے ہیں،راجہ فاروق حیدر

اسلام آباد(بیورو رپورٹ)وزیر اعظم آزادجموں وکشمیر راجہ محمد فاروق حیدرخان نے کہا ہے کہ مقبوضہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *