بریکنگ نیوز

مقبوضہ کشمیر، جعلی مقابلے میں شہید ہونیوالے راجوری کے تین مزدور قبرکشائی کے بعد سپرد خاک

سرینگر(کے ایم ایس) غیر قانونی طورپر بھارت کے زیر قبضہ جموں و کشمیر میں18 جولائی کو شوپیان میں بھارتی فوج کے ہاتھوں ایک جعلی مقابلے میں شہید ہونے والے راجوری کے تین مزدوروں کی میتیں قبرکشائی کے بعدان کے اہلخانہ کے حوالے کردی گئیں جنہیںبعد میں اپنے آبائی علاقوں میں سپرد خاک کردیاگیا ۔کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق بھارتی فوج نے 18 جولائی کو شوپیاں کے علاقے امشی پورہ میں تین نوجوانوں کو ایک جعلی مقابلے میں شہید کرکے انہیںنامعلوم عسکریت پسند قراردیا تھا۔ تاہم بعد ازاں بھارتی فوج کی طرف سے جاری کی گئی تصاویر سے نوجوانوں کے اہلخانہ نے ان کی شناخت امیتاز احمد ، ابرار احمد اور محمد ابرار کے طورپر کی جن کا تعلق راجوری سے تھا اور جو کام کی تلاش میں وادی کشمیر گئے تھے۔

ضلع بارہمولہ کے علاقے گانٹہ مولہ میںنوجوانوں کی میتیں قبروں سے جمعہ کی رات کو نکالی گئی تھیں۔21سالہ محمد ابرار اور26سالہ امتیاز احمد کو آبائی قبرستان دھرسکری میں سپرد خاک کردیا گیاجبکہ18سالہ ابرار احمد کی تدفین قریبی گائوں ترکسی میں کی گئی۔ نماز جنازہ میں مقامی لوگوں کی ایک بڑی تعداد نے شرکت کی۔بھارتی فوج نے 18جوالائی کو ضلع شوپیان کے علاقے امشی پورہ میں تین عسکریت پسند ہلاک کرنے کا دعویٰ کیاتھا ۔ بھارتی فوج نے سوشل میڈیا پر ان رپورٹس کے بعد تحقیقات شروع کی کہ یہ تینوں نوجوان جموں خطے کے ضلع راجوری کے رہنے والے تھے اور امشی پورہ میں لاپتہ ہوگئے تھے۔ شوپیاں میں مزدور ی کرنے والے نوجوانوں کے اہل خانہ نے بھی پولیس کے پاس شکایت درج کروائی تھی۔18 ستمبر کو بھارتی فوج نے کہا کہ اسے ثبوت مل گیا ہے کہ اس کی فوج نے مقابلے کے دوران آرمڈ فورسز اسپیشل پاور ایکٹ کے تحت حاصل اختیارات سے تجاوز کیاہے۔پولیس نے بھی اپنی تفتیش کا آغاز کیا اورنوجوانوں کے اہلخانہ کے ڈی این اے نمونے اکٹھے کیے جو مقتولین سے مل گئے۔

About admin

Check Also

کروناوائرس ابھی ختم نہیںہواہے یہ ایک بارپھرعوام کومتاثرکررہاہے،ڈاکٹر سردار عمر اعظم

کوٹلی:ڈپٹی کمشنر ڈاکٹر سردار عمر اعظم خان کی زیر صدارت ایس ایس پی کوٹلی راجہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *