بریکنگ نیوز

فاروق حیدر خان کیخلاف غداری کے مقدمے کے خلاف آزادکشمیر اسمبلی میں مزمتی قراردادیں

مظفرآباد: نواز شریف اور وزیر اعظم آزادکشمیر راجہ فاروق حیدر خان کے خلاف غداری کے مقدمے کے اندراج پر آزادکشمیر اسمبلی میں مزمتی قراردادیں پیشـ سینئر وزیر چودھری طارق فاروق وزیر قانون سردار فاروق طاہر اور وزیر حکومت احمد رضا قادری کی آزاد کشمیر اسمبلی میں مذمتی قرار دادیں پیش کیں حکومت واپوزیشن کا وزیر اعظم کے حق میں سخت ردعمل سامنے آیا منگل کے روز قانون ساز اسمبلی کے اجلاس میں 3 وزرا نے لاہور میں لیگی قیادت خصوصاً وزیر اعظم آزاد کشمیر کیخلاف غداری اور بغاوت کی درج ایف آئی آر پر الگ الگ قراردادیں پیش کیں۔قرار داد میں کہا گیا ہے کہ ”آزاد جموں وکشمیر قانون ساز اسمبلی کا یہ اجلاس وزیر اعظم آزاد حکومت ریاست جموںو کشمیر راجہ فاروق حیدر خان،پاکستان مسلم لیگ ن کی مرکزی قیادت، دو سابق وزرائے اعظم،سابق وفاقی وزراء اور ریٹائرڈ سینئر جرنیلوں کے خلاف لاہور کے ایک تھانہ میں درج کئے جانے والے ریاست پاکستان سے غداری اور بغاوت کے الزام پر قائم مقدمہ کی بھر پور مذمت کرتا ہے۔

اس ایوان کے نظر میں یہ مقدمہ ریاست پاکستان اور کشمیریوںکے لازوال رشتے کو گزند پہنچانے کی مذموم سازش ہے۔اس مقدمے کی وجہ سے جہاں اندرون ملک آئین کے پابند اور جمہوریت پسند عوام میں تشویش کی لہر دوڑ گئی ہے،وہیں آزاد کشمیر،مقبوضہ جموں وکشمیر اور بیرون ملک لاکھوں کشمیریوں میں اضطراب کی کیفیت پائی جاتی ہے۔ اس مقدمے سے مسئلہ کشمیرپر پاکستان کے اصولی موقف کو شدید نقصان پہنچا ہے۔یہ مقدمہ پاکستان کے مفاد کو نقصان پہنچانے کا سبب ہے جو ناعاقبت اندین عناصر کے ذہنوں کی اختراع ہے۔اس مضحکہ خیز مقدمہ سے پاکستان کی بین الاقوامی سطح پہ جگ ہسائی ہوئی ہے قرارداد پر اظہار خیال کرتے ہوئے ۔قائد حزب اختلاف چوہدری محمد یاسین نے ایوان میں خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب حکومت نے وزیراعظم آزادکشمیر پر ایف آئی آر درج کرکے ہندوستان کو پروپیگنڈا کرنے کا موقع دیا ہے۔جس کی پرزور الفاظ میں مزمت کرتے ہیں سابق وزیراعظم چوہدری عبدالمجید نے کہا کہ ریاست کے منتخب وزیراعظم کے خلاف ایک نامعلوم شخص کی ایف آئی آر درج کرنے کے پیچھے حکومت ہے جس کا مقصد ملک میں انتشار پھیلانا ہے وزیر اعظم آزادکشمیر کو اس میں نامزد کرنا قابل مزمت ہے۔پی ٹی آئی کے رکن اسمبلی ماجد خان نے کہا کہ وزیراعظم آزادکشمیر کے خلاف درج بغاوت کی ایف آئی آر کی مذمت کرتے ہیں مگر اس ایف آئی آر میں حکومت پاکستان کا کوئی کردار نہیں۔قرارداد پر حکومتی ممبران نے بھی اظہار خیال کیا جبکہ غداری مقدمہ میں وزیراعظم آزادکشمیر کا نام شامل کرنے پر پیپلز پارٹی, مسلم کانفرنس, جماعت اسلامی جے کے پی پی سمیت پی ٹی آئی نے بھی مزمت کی سپیکر نے تینوں قراردادوں کو یکجا کرنے کے لیے پارلیمانی کمیٹی تشکیل دیدی اجلاس آج دن دس بجے تک ملتوی کردیا
گیا۔

About admin

Check Also

کروناوائرس ابھی ختم نہیںہواہے یہ ایک بارپھرعوام کومتاثرکررہاہے،ڈاکٹر سردار عمر اعظم

کوٹلی:ڈپٹی کمشنر ڈاکٹر سردار عمر اعظم خان کی زیر صدارت ایس ایس پی کوٹلی راجہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *